“رقص” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سعدیہ بتول

سنو اے ہم سفر میرے
یہی کانٹوں بھرا رستہ
میری منزل کو جاتا ہے
کہ اب خوشبو کا یہ موسم
نہیں اس دل کو بھاتا ہے
تمھارے ساتھ ہو کر بھی
دلِ وحشی اکیلا ہے
میرے جیون کی وادی میں
عجب وحشت کا میلا ہے
میں اس وحشت کے میلے میں
اکیلی رقص کرتی ہوں
کبھی اٹھتی ،کبھی گرتی
کبھی سر کو پٹختی ہوں
نہ جیتی ہوں نہ مرتی ہوں
بس اک وحشت کے میلے میں
مسلسل رقص کرتی ہوں
مسلسل رقص کرتی ہوں …..

” سعدیہ بتول “

یہ بھی پڑھیں:جنت از رابعہ بصری

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.