“ماں ! بیٹی کے گھر مہماں “

آپ کے احساس میں شاداں نرم ہاتھوں کی حدت کو ترسی ہر ایک لمس پہ نازاں ــــ ادھوری رہ گئیں … More