قریہ قریہ خاک اڑائی کوچہ گرد فقیر ہوئے

قریہ قریہ خاک اڑائی کوچہ گرد فقیر ہوئے

پورب پچھم ڈھونڈا اس کو آخر گوشہ گیر ہوئے

کون ہیں یہ کیا ربط تھا ان سے کیا کہئے کچھ یاد نہیں

یہ چہرے کب دل میں اترے کس لمحے تصویر ہوئے

سو پیرائے ڈھونڈے پھر بھی آج کے دن تک عاجز ہیں

ہائے وہ بات جو کہہ بھی نہ پائے اور دفتر تحریر ہوئے

صدہا گہری سوچ میں ڈوبی صدیاں ہم پر صرف ہوئیں

اک دو برس کی بات نہیں ہم قرنوں میں تعمیر ہوئے

وہ شب وہ شبخون عدو کا کس اسلوب بیان کریں

گھائل کیسے پہروں تڑپے ہم کس طور اسیر ہوئے

کیا میں کیا تو آج بھی دونوں خاک ہیں کل بھی خاک بشیرؔ

جینا ان کا مرنا ان کا جو وجہ خیر کثیر ہوئے

بشیر بدر بشیر

فوٹوگرافی و کورڈیزائن:صوفیہ کاشف

4 Comments

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.