محجوبہ________ثروت نجیب

🌘 اک عرصہ ہوا چاند دیکھا نہیں چاندنی سے ملے مدتیں ہو گئیں شبِ سیاہ سے جا ملی بخت کی … More

“آخر کب تک”

(دشتِ برچی کابل کے معصوم شہداء کے نام! ) لہو سے لتھڑے بکھرے اوراق ــــ ظلم کی آنکھ مچولی میں … More

 ” عورت ” ________از ثروت نجیب

محبت میں گُندھی ہوئی بہتے پانی کی طرح پاکیزہ چاند سے بھی احسن چاندنی سے ذیادہ حسیں بنیاد ہر بندھن … More

“آگہی کا دکھ”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ثروت نجیب

کتابیں ان پڑھ کے چولہے کا ایندھن’ اخبار روٹیاں لپیٹتے اور شیشے چمکاتے ہیں کتب خانے سنسان ـ ـ ـ … More

ملامت ،،،،،،،،از ثروت نجیب

دائرے میں.بیٹھی لڑکیاں دف بجا بجا کر بابولالے گا رہیں تھیں ـ دلہن جاؤ تمھارے آگے خیر درپیش ہو ــــ … More